Skip to main content

Posts

‘Illiterate Nuclear State’

How US became a superpower dominating the former Soviet Union and eliminating the all ideologies other than capitalism, how France and neighbor countries survive the French Revolution’s aftermaths, how Industrial progress modernize the ignorant Europe, how China is taking over the world economy, how Japan survive after dreadful atomic bombing and finally how still more than half population of Pakistan is living under poverty line. Neutralizing all other intervening variables we will find one common variable seeding these all events is education. We met with desperate and astonishing figures while analyzing education condition in Pakistan, standing at 46% literacy rate with only 26% of which girls are literate as per ministry sources, however independent sources paint more horrible picture. We know without education a person can’t become doctor to provide medical aid to patients suffering from disease, one can’t become engineer to build roads, infrastructure, buildings, and educational …
Recent posts

What Tribune tells about Islamophobia

Media’s vie for Hegemony!

We are living in an era of multi-platform world, now media is more than an instrument of corporatocracy. One can propagate its own set of beliefs or ideas through a variety of mediums available like YouTube, face book, twitter and many other social interactive sites to create an impact on majority of audience using these mediums to receive and disseminate information. However, war of ideologies is continued unimpeded at new battle fields, to become dominant. Hegemony of media is varying if not fading in its nature in present era of multi-dominant ideas. As Kerlinger[i] and Luhman[ii] describe this fact as ‘multiple realities’ and ‘fluidity of meaning’ which then combine to make a broader picture, a dominant one, widely believed without any resistance. Now Hegemony is transferring to groups of similar minded people as there is great flux of ideas one replacing other, sometime every other day. However, mass media too regaining Hegemony by using these new technologies. The concept develop…

When natural disasters hit Schools

Natural disasters are nearly impossible to avoid even in supposedly modernized world today. Millions of people are affected by natural disasters every year, and the impact could be catastrophic. Floods, wind and storms, earthquakes, drought, volcanic eruption, and tsunamis cause 400 national disasters worldwide, an average of 74,000 deaths, affecting more than 230 million people every single year. The United Nations Children's Fund (Unicef) in a tweet, widely used social media site to disseminate information, said that about 175 school going people are affected by natural disasters each year. Most of them face disruption to schooling. So when natural disaster hits a country or region, children of that area count to the most affectees, suffering not only from psychological traumas, diseases but also school closures.

A tweet by United Nations Children's Fund (Unicef)on May 20 ahead of Moonsoon season in most flood affected regions. Natural disasters are not equally devastating for …

آزاد فلسطینی ریاست، اسرائیل اور عرب ممالک

اسرائیل کی حماس سے کوئی لڑائی نہیں اسرائیل کی لڑائی ایک آزاد فلسطینی ریاست کے قیام سے ہے، جنگ بندی کے اعلان کے باوجود معصوم جانوں کو درندگی سے قتل کرنے والی یہ امریکہ نواز تسلطی قوم اب تک 549 بچوں سمیت2048 افراد کو شہد کر چکی ہے، ہم بہت زیادہ تاریخی مباحثوں میں الجھنے کی بجائے اگر پچھلے چند سالوں کے واقعات پر نظر ڈالیں تو ہمیں اسرائیل اور فلسطینی ریاست کے قیام کی اس لڑائی میں عرب لیگ کی کم ہوتی حمایت واضح پتہ لگے گئی، فلسطین کی رایاست کا قیام  سب سے پہلے تو اسرائیل کے لیے ہی کبھی بھی قابل قبول نہیں رہا کیونکہ یہ صہیونی ریاست کے خواب کو چکنا چور کر دے گا اور فلسطینیوں کی زمین پر ناجائز قبضے کی کوششوں کو بھی سبوتاژ کرے گا لیکن اس سارے واقعات میں عرب اور مسلم ممالک کا کردار بھی اپنے مفادات کے گر دگھومتا ہے۔ کلونیل راج میں قابض ملک کی یہی کوشش ہوتی ہے کہ وہ مقامی لوگوں کو جتنا کمزور رکھ سکتا ہو وہ رکھتا ہے یہی پالیسی اسرائیل کی فلسطین بارے ہے،اسرائیل فلسطینوں کی زمین پر قبضہ کرنا، ان کی سرحدوں کو اپنے کنٹرول میں رکھنا،  غزہ کو جیل جیسی شکل دیکر فلسطینیوں کو اس میں قید کرنا اور ان پر اپنے ہ…

ماحولیاتی تبدیلیاں اور ترقی پذیر ممالک (محمد شاہد عمران)

ماحولیاتی تبدیلیوں کی حالیہ صورت حال سے دنیا کے تمام ممالک میں تشویش پائی جاتی ہے اور تقریبآ تمام ممالک ہی اس کے حل کے لیے کوششوں کو تیز کرنے پر زور دیتے ہیں لیکن اس کے ساتھ ہی عملی طور پر کسی موثر اقدام سے بھی گریزاں ہیں ان تبدیلیوں کے اثرات ترقی پذیر ممالک میں خطرناک حد تک محسوس کیے جا سکتے ہیں باوجودیکہ یہ ممالک اس کی سب سے کم وجہ بنتے ہیں۔ عالمی قوتوں اور ترقی یافتہ اقوام کو نہ صرف ان تبدیلیوں کے مضر اثرات کو پیدا کرنے سے گریز کرنا چاہیئے بلکہ ان سے زیادہ متاثر ہونے والے ممالک کی فنی اور مالی امداد بھی کرنی چاہیئے۔  صنعتی ترقی اور نت نئی ٹیکنالوجی کتنی ہی ضروری سہی لیکن یہ اس صورت میں قابل قبول نہیں کہ زمین انسانوں کے رہنے کہ قابل ہی نہ رہے۔پچھلے دنوں جاپان کے شہر یوکوہاما میں دنیا کے سائنسدان ماحولیاتی تبدیلی کے ممکنہ خطرات کو جانچنے کے لیے جمع ہوئے۔جس میں سمندر کے لیول کے سال 2100  تک تین فٹ تک اضافے کا خد شہ ظاہر کیا گیا جو کہ زمینی درجہ حرارت میں حالیہ اضافے کی بدولت ہوگا اس کا مطلب ترقی پذیر ممالک کے غریب عوام کے لیے اس کے سوا کچھ نہیں ہوگا، کہ ایک سائکلون یا دوسرا طوفان ان کی…